خاتون کے پیٹ میں شدید درد، سرجن نے آپریشن کیا تو اندر 4 ہزار۔۔۔ اندر کیا تھا؟ دیکھ کر ڈاکٹر کو بھی آنکھوں پر یقین نہ آئے

loading...

پتے کی پتھری عام پایا جانے والا مسئلہ ہے۔ جب اس مرض سے متاثرہ مریض کا آپریشن کیا جاتا ہے تو عموماً چند ایک پتھریاں برآمد ہوجاتی ہیں، یا بعض اوقات غیر معمولی کیس میں پتھریوں کی تعداد درجنوں میں بھی ہوسکتی ہے، مگر بھارت میں ایک عجیب و غریب واقع پیش آیا۔ ناشک شہر سے تعلق رکھنے والی ایک خاتون کے پتے کا آپریشن کیا گیا تو اس میں سے چند درجن یا چند سو نہیں بلکہ ہزاروں پتھریاں برآمد ہوگئیں۔

ہندوستان ٹائمز کے مطابق 43 سالہ یوگیش یاولی گزشتہ چند دنوں سے تکلیف میں مبتلا تھی۔ وہ کرشنا ہسپتال گئی جہاں اس کے متعدد ٹیسٹ کئے گئے اور معلوم ہو اکہ اس کے پتے میںپتھری ہے جس پر ڈاکٹر امیت شردھ نے اس کے آپریشن کا فیصلہ کیا۔ ڈاکٹر صاحب کو بالکل اندازہ نہیں تھا کہ اس آپریشن کی صورت میں وہ ایک عجوبے کا سامنا کرنے والے ہیں۔ خاتون کے پتے سے 4100 پتھریاں برآمد ہوئیں جن کا قطر تین ملی میٹر سے چار ملی میٹرتھا۔ یہ آپریشن تقریباً چار گھنٹے جاری رہا جس کے بعد ہسپتال کے عملے کو پتھریاں گننے میں مزید تقریباً چار گھنٹے لگے۔

loading...

ڈاکٹر امیت شردھ کا کہنا تھا کہ موٹاپے، ذیا بیطس، کولیسٹرول وغیرہ کے مریضوں میں پتے کی پتھری کا امکان بھی زیادہ ہوتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اب تک وہ بے شمار مریضوں کے آپریشن کرچکے ہیں لیکن اتنی بڑی تعداد میں پتھریاں انہوں نے پہلی بار دیکھی ہیں۔

پتے کی زیادہ سے زیادہ پتھریوں کا ریکارڈ اس سے پہلے بھارتی ریاست مغربی بنگال کے ڈاکٹر ایم ایل ساہا کے پاس ہے جنہوں نے 2015ءمیں ایک مریض کے پتے سے 11950 پتھریاں نکالیں۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ یہ پتھریاں عموماً کولیسٹرول سے بنتی ہیں اور چونکہ مریض بروقت ڈاکٹر سے رابطہ نہیں کرتے تو یہ بڑی تعداد میں ان کے جسم میں جمع ہوتی جاتی ہیں۔ مسئلہ پیچیدہ ہوجانے پر آپریشن ہی واحدراستہ ہوتا ہے اور اگر بروقت آپریشن نہ کیا جائے تو صورتحال سنگین ہوسکتی ہے، اوربعض کیسز میں پتے کی پتھری کینسر کی وجہ بھی بن سکتی ہے۔

loading...

Leave a Comment